ہم بلاگرکیوں نہیں بن سکتے

اُردوسوشل میڈیا سمٹ  کی آمدآمد ہے اور پورے پاکستان بلکہ دوسرے ممالک سے بھی بلاگر پر تول رہے ہیں موضوعات اور مکالمات کی تیاریاں ہیں- ہم نے کبھی بلاگ نہیں لکھا
لیکن اُردوسوشل میڈیا سمٹ کے جوش میں بلاگربننے کی ٹھان لی ہے- یوں تو ہمارے دوست رزنین نے ملکہِ جذبات سے موسیقی کی باقاعدہ تعلیم حاصل کی لیکن اپنے فن کا مظاہر نہیں کیا اور
بلاگ چلانے لگے ایسے ہی کاشف اکرم وارثی بھی کچھ فنون سیکھنے کے باوجود میدان میں نہیں اُترے بلکہ بلاگر بن بیٹھے جس سے یہ ثابت ہوتاہے بلاگر ہونا یقینی اچھا اور معتبرکام ہے-
ان مذکورہ بالا صاحبان کی نجی محافل میں پرفارمنس کی ایک آدھ وڈیو یوٹیوب پرتلاش کرنے سے مل جاتی ہے ، یوٹیوب کی پاکستان میں بندش پر یہ دونوں حضرات خوش ہیں کہ ان کی بلاگری
کو ہی ان کا اول وآخر فن سمجھا جارہا ہے – ہمارے اور بھی کئی دوست بلاگ لکھتے ہیں اور ہم ان کی شہرت کو دیکھ کر اس شعبے میں قسمت آزمانے کا ارادہ کرچکے ہیں-
ہمارے ایک  اور دوست جو آئی ٹی  کا بلاگ لکھتے ہیں فرماتے ہیں لوگ ان کا بلاگ تکیہ لگا کہ پڑھتے ہیں ہم سمجھ گئے لوگوں پہ ان کا بلاگ پڑھ کر نیند کا غلبہ طاری ہوجاتاہوگا اور وہ تکیہ
لگاکے سوجاتے ہوں گے – ہم نہیں چاہتے کے آپ ہمارابلاگ تکیے یا پیسے لگاکرپڑھیں بس عینک اور دھیان لگاکرپڑھیں اور تبصرہ بھی فرمائیں تاکہ ہماری حوصلہ افزائی ہوسکے اور ہم
مزید لکھ سکیں – اگرچہ ہم گفتار کے تو غازی مانے جاتے ہیں لیکن اب انگلی کٹا کرہی سہی لیکن  تحریر کے شہیدوں میں نام لکھوانے کی خواہش ہے-
یوں ہم فنوں لطیفہ کی کسی  شاخ کوبھی اپنا سکتے ہیں لیکن وہاں پہلے ہی ہر شاخ پہ کوئی نہ کوئی — بیٹھا ہے جس کی وجہ سے لوگوں میں گلستانِ فنون لطیفہ کے انجام پر تشویش
پائی جاتی ہے اور ہم اس میں مزید اضافہ نہیں کرسکتے -بلاگ لکھنا ہمیں رکشہ چلانے جیسا لگتا ہے اپنی دھن میں مست خراماں خراماں اُڑاے جانا یعنی اپنی ہی کہے جانا کوئی 
تبصرہ پسند نہ آئے تو حذف کیا اور اپنی راہ پہ گامزن -آج کل یوں بھی اُردوسوشل میڈیا کا سین آن ہے – اُردو سوشل میڈیا سمٹ کراچی میں منقعد ہورہی ہے
اورہم اس سنہرے موقع کو ہاتھ سے نہیں جانے دینا چاہتے اور خود کو بلاگرکہلوانا اور اپنے شہروالوں کو اپنا مزید گرویدہ وشیدا بنانے کا اس سے بہتر وقت بھلا اور کون سا ہوگا- 
بلاگ لکھتے رہے تو کوئی تمغہ وغیرہ بھی حاصل کرسکتے ہیں یوں بیٹھے بٹھائے ملک کو قوم کا نام روشن کرڈالیں گے –
Advertisements

سائے کی قدر

مشہورشخصیات اورمعروف ادیبوں سے لے کر ایک عام آدمی تک ماں کے رشتے اور حوالے سے  جذباتی ہوجاتاہے اور اس کی عظمت کا اعتراف برملا کرتاہے ماں کے ہاتھ کے بنے کھانے کی تعریف کرنا اور اس کے ذائقے کوئی نہیں بُھولتا کیونکہ بلاشبہ ماں کا ہماری زندگی پہ بہت احسان اور اثر ہوتا ہے لیکن ہم باپکی قربانیوں ، اُس کے اپنے شوق ترک کردینے اور ہمارے لیے انتھک محنت کو کم کم ہی مانتے اور اس کے شکرگذار نہیں ہوتے –  ماں کی ممتا کا ذکرتو بہت ہوگیا لیکن وہ وقت کب آئے گاجب اُس باپ کاہمارے لیے عمربھر مشقت کرنا بھی سراہا جائے محض” اُن کی ذمہ داری ہے  ” کہہ کر جان نہ چُھڑائی جائے- کب اُن کے مشورے زیادہ اہم ہوں گے اورکب اُن سے ملنی والی رقم کو ہم اُن کے خون پسنے کی کمائی سمجھ کر احترام کرکے اُن کا شکریہ ادا کریں گے –
ہماری توقعات اور ضروریات زیادہ ہوتی ہیں والد کی کمائی سے ، ہمیں ہمیشہ یہی احساس ہوتا ہے ہمیں جیب خرچ کم ملتا ہے یہ احساس اُس وقت بھی نہیں ختم ہوتا جب ہم خودکمانے کے قابل ہوجاتے ہیں کہ کس طرح سے اخرجات کو تقسیم کیا جاتاہے – ہم تاعمر اُس صبح گھر سے نکل کر دنیا کا مقابلہ کرنے اور ہماری ضررویات ، تعلیم اور شوق حد یہ ہے شادی بیاہ تک کے اخراجات کے لیے محنت کرنے والے شخص کی اُتنی قدر نہیں کرتے بلکہ ذکر تک نہیں کرتے جو اُس کابے حد حقدار ہوتاہے اور عمرکا ایک بڑا حصہ ہمارے لیے وقف کردیتاہے –
جس کے پیروں تلے جنت تو نہیں لیکن وہی پاؤں دن بھر بھاگتے دوڑتے ہیں ہمیں اس دنیا میں آسائیشات اور جنت فراہم کرنے لیے اور اپنے وجود کو تھکا کرہمیں آرام فراہم کرنے ،نرم گرم بستر اور انواع واقسام کی نعمتیں فراہم کرنے کے لیے – جس کی شب وروز محنت ہمیں دنیا میں جنیے کے قابل بناتی ہے اب
اس کی کا ذکر بھی باآواز بلند ہونا چاہیے -میں صرف یہ عرض کرنا چاہوں گا اس سائے کی سلامتی کو اس کی زندگی میں ہی بتادیں کے وہ ہمارے لیے بہت اہمیت اور معنی رکھتا ہے کبھی جب اپنے مشاغل سے فرصت ملے تو رات سونے سے قبل اُن کے ہاتھ تھام کر بوسہ دیں لیں کہ یہ سعادت یہ لمحے ہمشہ آپ کا نصیب نہیں ہوگے-

ﺳﮑﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﯽ

ﺑﺎﺑﮯ ﻧﮯ ﻟﻤﺒﺎ ﺳﺎﻧﺲ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﻮﻻ ’’ ﮐﺎﮐﺎ ﺗﻢ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮐﯿﺎ ﮨﻮ ‘‘ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯿﺎ ’’ ﮐﯿﺎﺁﭖ ﮐﻮ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﺳﻮﻧﺎ ﺑﻨﺎﻧﺎ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ‘‘

ﺑﺎﺑﮯ ﻧﮯ ﺧﺎﻟﯽ ﺧﺎﻟﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﮨﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﺮ ﮨﻼ ﮐﺮ ﺑﻮﻻ
’’ ﮨﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﯿﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ ‘‘ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯿﺎ ’’ ﮐﯿﺎ ﺁﭖ ﻣﺠﮭﮯ ﯾﮧ ﻧﺴﺨﮧ ﺳﮑﮭﺎ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ ‘‘
ﺑﺎﺑﮯ ﻧﮯ ﻏﻮﺭ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﭼﮭﺎ ’’ ﺗﻢ ﺳﯿﮑﮫ ﮐﺮ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﻭ ﮔﮯ ‘‘ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯿﺎ ’’ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﻟﺖ ﻣﻨﺪ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﻮﮞ ﮔﺎ ‘
‘ ﺑﺎﺑﮯ ﻧﮯ ﻗﮩﻘﮩﮧ ﻟﮕﺎﯾﺎ ‘ ﻭﮦ ﮨﻨﺴﺘﺎ ﺭﮨﺎ ‘ ﺩﯾﺮ ﺗﮏ ﮨﻨﺴﺘﺎ ﺭﮨﺎ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺩﻡ ﭨﻮﭦ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﮐﮭﺎﻧﺴﯽ ﮐﺎ ﺷﺪﯾﺪ ﺩﻭﺭﮦ ﭘﮍ ﮔﯿﺎ۔ ﻭﮦ ﮐﮭﺎﻧﺴﺘﮯ ﮐﮭﺎﻧﺴﺘﮯ ﺩﮨﺮﺍ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﺑﮯ ﺣﺎﻟﯽ ﮐﮯ ﻋﺎﻟﻢ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﺮ ﺗﮏ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﯽ ﭘﺎﺋﻮﮞ ﭘﺮ ﮔﺮﺍ ﺭﮨﺎ ‘ ﻭﮦ ﭘﮭﺮ ﮐﮭﺎﻧﺴﺘﮯ ﮐﮭﺎﻧﺴﺘﮯ ﺳﯿﺪﮬﺎ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﭼﮭﺎ ’’
ﺗﻢ ﺩﻭﻟﺖ ﻣﻨﺪ ﮨﻮ ﮐﺮ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﻭ ﮔﮯ ‘‘ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ ’’ ﻣﯿﮟ ﺩﻧﯿﺎ ﺑﮭﺮ ﮐﯽ ﻧﻌﻤﺘﯿﮟ ﺧﺮﯾﺪﻭﮞ ﮔﺎ
‘‘ ﺍﺱ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ’’ ﻧﻌﻤﺘﯿﮟ ﺧﺮﯾﺪ ﮐﺮ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﻭ ﮔﮯ
‘‘ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ ’’ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺵ ﮨﻮﮞ ﮔﺎ ‘ ﻣﺠﮭﮯ ﺳﮑﻮﻥ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ ‘‘
ﺍﺱ ﻧﮯ ﺗﮍﭖ ﮐﺮ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ ’’ ﮔﻮﯾﺎﺗﻤﮩﯿﮟ ﺳﻮﻧﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﻟﺖ ﻧﮩﯿﮞﺴﮑﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ ‘‘ ﻣﯿﮟ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﺭﮨﺎ
‘ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺟﮭﻨﺠﻮﮌﺍ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﭼﮭﺎ ’’ ﮐﯿﺎ ﺗﻢ ﺩﺭﺍﺻﻞ ﺳﮑﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ ﻣﯿﮟ ﮨﻮ؟ ‘‘
ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﮨﺮﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺩﻭﻟﺖ ﮐﻮ ﺧﻮﺷﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﮑﻮﻥ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺍﮨﻤﯿﺖ ﺩﯾﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﮕﺮ ﺑﺎﺑﮯ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﻨﻔﯿﻮﺯ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺳﯽ ﮐﻨﻔﯿﻮﮊﻥ ﻣﯿﮟ ﮨﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﺮ ﮨﻼ ﺩﯾﺎ ‘
ﺑﺎﺑﮯ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﻟﻤﺒﺎ ﻗﮩﻘﮩﮧ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻗﮩﻘﮩﮯ ﮐﺎ ﺍﺧﺘﺘﺎﻡ ﺑﮭﯽ ﮐﮭﺎﻧﺴﯽ ﭘﺮ ﮨﻮﺍ ‘ ﻭﮦ ﺩﻡ ﺳﻨﺒﮭﺎﻟﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﻮﻻ ’’ ﮐﺎﮐﺎ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺳﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺑﻨﺪﮦ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮧ ﺳﮑﮭﺎﺩﻭﮞ
ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺩﻭﻟﺖ ﻣﻨﺪ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﭘﺮﺳﮑﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺵ ﺭﮨﻨﮯ ﮐﺎ ﮔﺮ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮧ ﺳﮑﮭﺎﺩﻭﮞ ‘‘
ﻣﯿﮟ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﺭﮨﺎ ‘ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ’’ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﯽ ﺧﻮﺍﮨﺸﯿﮟ ﺟﺐ ﺗﮏ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﺳﮯ ﻟﻤﺒﯽ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺗﮏ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ ‘ ﺗﻢ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﻮﺍﮨﺸﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﻋﻤﺮ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺟﻮﺩﺳﮯ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﮐﺮ ﻟﻮ ‘ ﺗﻢ ﺧﻮﺷﯽ ﺑﮭﯽ ﭘﺎﺋﻮ ﺟﺎﺋﻮ ﮔﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﮑﻮﻥ ﺑﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﺧﻮﺷﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﮑﻮﻥ ﭘﺎ ﺟﺎﺋﻮ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺗﻢ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺳﮯ ﺑﻨﺪﮮ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﻮﮔﮯ ‘‘
ﻣﺠﮭﮯ ﺑﺎﺑﮯ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺳﻤﺠﮫ ﻧﮧ ﺁﺋﯽ ‘ ﺑﺎﺑﮯ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﻟﮑﮭﯽ ﺗﺸﮑﯿﮏ ﭘﮍﮪ ﻟﯽ ‘ ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ’’ ﺗﻢ ﻗﺮﺁﻥ ﻣﺠﯿﺪ ﻣﯿﮟ ﭘﮍﮬﻮ ‘ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺧﻮﺍﮨﺸﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻟﺘﮭﮍﮮ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﻣﯿﮟ ﺭﻧﮕﮯ ﺧﻮﺍﮨﺸﻮﮞ ﺳﮯ ﺁﺯﺍﺩ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﻨﺪﮦ ‘‘
ﺑﺎﺑﮯ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﺎﻣﺮﺍﻥ ﮐﯽ ﺑﺎﺭﮦ ﺩﺭﯼ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺍﺷﺎﺭﮦ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﻮﻻ ’’ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺗﮭﺎ ‘ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﻋﻤﺮ ﺳﮯ ﻟﻤﺒﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﻋﻤﺎﺭﺕ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺧﺒﻂ ﻣﯿﮟ ﻣﺒﺘﻼ ﺗﮭﺎ ‘ ﻭﮦ ﭘﻮﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺩﻭﻟﺖ ﺑﮭﯽ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﺗﺎ ﺭﮨﺎ ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﺩﻭﻟﺖ ﺍﻭﺭ ﻋﻤﺎﺭﺕ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺳﮑﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﯽ ﻧﮧ ﺩﯼ ‘
ﺧﻮﺵ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﮞ ‘ ﺍﺱ ﺩﻭﻟﺖ ﻣﻨﺪ ﮐﯽ ﮔﺮﯼ ﭘﮍﯼ ﺑﺎﺭﮦ ﺩﺭﯼ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﺳﺘﯽ ﺑﺎﺭﺵ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﺍﻣﺎﻥ ﺑﯿﭩﮫ ﮐﺮ ‘‘ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺑﮯ ﺻﺒﺮﯼ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ’’ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ‘‘ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻗﮩﻘﮩﮧ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ ’’ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻢ ﻧﮩﯿﮟ
! ﺗﻢ ﺟﺐ ﺗﮏ ﺗﺎﻧﺒﮯ ﮐﻮﺳﻮﻧﺎ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺧﺒﻂ ﭘﺎﻟﺘﮯ ﺭﮨﻮ ﮔﮯ ﺗﻢ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺗﮏ ﺧﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﺑﮭﭩﮑﺘﮯ ﺭﮨﻮ ﮔﮯ۔ ﺗﻢ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺗﮏ ﺳﮑﻮﻥ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﺭﮨﻮ ﮔﮯ ‘‘ ﺑﺎﺑﮯ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺯﻣﯿﻦ ﺳﮯ ﭼﮭﻮﭨﯽ ﺳﯽ ﭨﮩﻨﯽ ﺗﻮﮌﯼ ﺍﻭﺭ ﻓﺮﺵ ﭘﺮ ﺭﮔﮍ ﮐﺮ ﺑﻮﻻ ’’
ﻟﻮ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺑﻨﺪﮦ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﻧﺴﺨﮧ ﺑﺘﺎﺗﺎ ﮨﻮﮞ ‘ ﺍﭘﻨﯽ ﺧﻮﺍﮨﺸﻮﮞ ﮐﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﺳﮯ ﺁﮔﮯ ﻧﮧ ﻧﮑﻠﻨﮯ ﺩﻭ ‘ ﺟﻮ ﻣﻞ ﮔﯿﺎ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺷﮑﺮ ﮐﺮﻭ ‘ ﺟﻮ ﭼﮭﻦ ﮔﯿﺎ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﻧﮧ ﮐﺮﻭ ‘ ﺟﻮ ﻣﺎﻧﮓ ﻟﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺩﮮ ﺩﻭ ‘ ﺟﻮ ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎﺋﮯ ﺍﺳﮯ ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎﺋﻮ ‘ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﺁﺋﮯ ﺗﮭﮯ ‘ ﺑﮯ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﻭﺍﭘﺲ ﺟﺎﺋﻮ ﮔﮯ ‘
ﺳﺎﻣﺎﻥ ﺟﻤﻊ ﻧﮧ ﮐﺮﻭ ‘ ﮨﺠﻮﻡ ﺳﮯ ﭘﺮﮨﯿﺰ ﮐﺮﻭ ‘ ﺗﻨﮩﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﺳﺎﺗﮭﯽ ﺑﻨﺎﺋﻮ ‘ ﻣﻔﺘﯽ ﮨﻮ ﺗﺐ ﺑﮭﯽ ﻓﺘﻮﯼٰ ﺟﺎﺭﯼ ﻧﮧ ﮐﺮﻭ ‘ ﺟﺴﮯ ﺧﺪﺍ ﮈﮬﯿﻞ ﺩﮮ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ ﺍﺱ ﮐﺎﮐﺒﮭﯽ ﺍﺣﺘﺴﺎﺏ ﻧﮧ ﮐﺮﻭ ‘
ﺑﻼ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﺳﭻ ﻓﺴﺎﺩ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ‘ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﻮﭼﮭﮯ ﺗﻮ ﺳﭻ ﺑﻮﻟﻮ ‘ ﻧﮧ ﭘﻮﭼﮭﮯ ﺗﻮ ﭼﭗ ﺭﮨﻮ ‘ ﻟﻮﮒ ﻟﺬﺕ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﻟﺬﺗﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺑﺮﺍ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ‘
ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﺧﻮﺷﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﮑﻮﻥ ﮐﻢ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺳﯿﺮ ﭘﺮ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺋﻮ ‘ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﻣﯿﮟ ﺳﮑﻮﻥ ﺑﮭﯽ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﯽ ﺑﮭﯽ ‘
ﺩﯾﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺷﯽ ﮨﮯ ‘ ﻭﺻﻮﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻏﻢ ‘ ﺩﻭﻟﺖ ﮐﻮ ﺭﻭﮐﻮ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺧﻮﺩ ﺑﮭﯽ ﺭﮎ ﺟﺎﺋﻮ ﮔﮯ ‘ ﭼﻮﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﻮ ﮔﮯ ﺗﻮ ﭼﻮﺭ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﻮ ﮔﮯ۔
ﺳﺎﺩﮬﻮﺋﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮭﻮ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺍﻧﺪﺭ ﮐﺎ ﺳﺎﺩﮬﻮ ﺟﺎﮒ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ‘ ﺍﻟﻠﮧ ﺭﺍﺿﯽ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ﺗﻮ ﺟﮓ ﺭﺍﺿﯽ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ‘ ﻭﮦ ﻧﺎﺭﺍﺽ ﮨﻮ ﮔﺎ ﺗﻮ ﻧﻌﻤﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﺧﻮﺷﺒﻮ ﺍﮌ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ‘
ﺗﻢ ﺟﺐ ﻋﺰﯾﺰﻭﮞ ‘ ﺭﺷﺘﮯ ﺩﺍﺭﻭﮞ ‘ ﺍﻭﻻﺩ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﭼﮍﻧﮯ ﻟﮕﻮ ﺗﻮ ﺟﺎﻥ ﻟﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻢ ﺳﮯ ﻧﺎﺭﺍﺽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻢ ﺟﺐ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺩﺷﻤﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺭﺣﻢ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﻮ ﺗﻮ ﺳﻤﺠﮫ ﻟﻮ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺧﺎﻟﻖ ﺗﻢ ﺳﮯ ﺭﺍﺿﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﺠﺮﺕ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﮐﺒﮭﯽ ﮔﮭﺎﭨﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺘﺎ ‘‘
ﺑﺎﺑﮯ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﻟﻤﺒﯽ ﺳﺎﻧﺲ ﻟﯽ ‘ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﭼﮭﺘﺮﯼ ﮐﮭﻮﻟﯽ ‘ ﻣﯿﺮﮮ ﺳﺮ ﭘﺮ ﺭﮐﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ
’ ﺟﺎﺋﻮ ﺗﻢ ﭘﺮ ﺭﺣﻤﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﯾﮧ ﭼﮭﺘﺮﯼ ﺁﺧﺮﯼ ﺳﺎﻧﺲ ﺗﮏ ﺭﮨﮯ ﮔﯽ ‘ ﺑﺲ ﺍﯾﮏ ﭼﯿﺰ ﮐﺎ ﺩﮬﯿﺎﻥ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺧﻮﺩ ﻧﮧ ﭼﮭﻮﮌﻧﺎ ‘ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻮ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﮐﺎ ﻣﻮﻗﻊ ﺩﯾﻨﺎ ‘ ﯾﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺳﻨﺖ ﮨﮯ ‘
ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﮐﻮ ﺗﻨﮩﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﮭﻮﮌﺗﺎ ‘ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﮬﯿﺎﻥ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﺟﻮ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ ﺍﺳﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﺩﯾﻨﺎ ﻣﮕﺮﺟﻮ nﻭﺍﭘﺲ ﺁ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ ‘ ﺍﺱ ﭘﺮ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﭘﻨﺎ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﺑﻨﺪ ﻧﮧ ﮐﺮﻧﺎ ‘
ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﮨﮯ ‘ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺍﭘﺲ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺍﭘﻨﺎ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮐﮭﻼ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ ‘ ﺗﻢ ﯾﮧ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﻨﺎ ‘ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﭘﺮ ﻣﯿﻼ ﻟﮕﺎ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ‘‘